گلابی کالم قسط دوئم

Spread the love

محمد قاسم سرویا

گلابی کالم۔۔۔۔قسط دوئم

روندیاں دھوندیاں اچھے نے پہلی جمات پاس کر ہی لی۔۔۔پر جس دن اس نے چھٹی کرنی ہوتی اوہ کدی اپنی دادی تے کدی اپنی نانی کے مرنے کا بہانہ کرکے اپنی موج مستی کرنے لگ جاتا۔دوچار دن سیر سپاٹے اور کھر مستیاں کرنے کے بعد ۔۔۔ جب اس دے گھار والے اس سے تنگ آ جاتے تو کدی اس کا ابا اور کدی اس کا بھرا اس کو ’’دَھک ولَکّی‘‘ سکول میں چھڈ جاتے۔لیکن اس کے کبوتر باز یار بیلی اس کا پچھا نئیں چھڈتے تھے۔پکے پرچیاں توں بعد پھر سکول سے چھٹیاں ہوگئیاں۔
اگلی جماعتے چڑھنے کے بعد ارشد المعروف اچھّا جب دوبارتوں سکول میں پونچیا تو وہ ہتھ جوڑ کے سر کے سامنے کھلو گیا اور بڑی مَٹھی جئی آواز میں منتاں کرن لگ پیا۔۔۔سرجی ۔۔۔ میرے کو اگلی جمات میں چڑھنے کا بڑا چا ء چڑھیا تھا جی ۔۔۔پر میرے ابے نے آکھیا تھا جی کہ واڈھی کے دن لاگے آ گئے ہیں تو سرجی سے تھوڑی جئی چھٹیاں لے کے آنا۔۔۔اسیں سارے گھر دے جی رل مل کے محنت کرکے سال جوگے چارمن دانے جمع کر لواں گے ۔۔۔میرا ابا میرے کو ایہو جئی چنگیاں گلاں اکثر دَستا رہتا ہے جی۔۔۔ کہ ۔۔۔ ’’ جِناں دے بھڑولی وچ دانے ۔۔۔ اونہاں دے کملے وی سیانے۔۔۔
سر جی تہانوں تو چنگی طراں معلوم ہیگا جی ۔۔۔پورے سال کے بعد ایہو ای تو دن ہوتے ہیں جی ۔۔۔ جب پورے پنڈ والے واڈھی کے کماں کاراں میں رُجھ جاتے ہیں۔ بلکہ میرا تو ابا کہتا ہے جی۔۔۔ واڈھی (گندم کی کٹائی) کے دنوں میں جٹوں نے اپنی موئی ماں بھڑولے پا لئی تھی جی کہ جب دانے پھکے کے کم سے ویہلے ہوجائیں گے تو ماں کو بعد وچ دفنا لاں گے۔
سرجی نے بھی اچھے کی ٹون میں ہی کہا۔۔۔یار اچھے۔۔۔ اس طراں تو تمہارا پڑھائی کا بڑا نصقان ہو جے گا۔۔۔
اچھا کہن لگا۔۔۔ سرجی تسی ماسا فکر نہ کروجی۔۔۔ میں اک دن اپنے ابے کے ساتھ واڈھی کروا لیا کراں گا جی تے اک دن سکولے پڑھ لیا کراں گا ۔۔۔ایس طرں میرا ابا وی راجی۔۔۔تے۔۔۔سرجی وی راضی باضی۔۔۔
یہ گل آکھ کر اچھا ۔۔۔مَٹھّا جیا ہسنے لگ پیا۔
اگلے دن اچھے نے سکول سے چھٹی کرلی لیکن اچھا جاتے وقت پکا وعدہ کر کے بھی گیا تھا کہ سر جی جدوں میں کل دوبارتوں سکولے آواں گا جی ۔۔۔ تو آپ کواپنے پورے دن کی کہانی الف سے ے تک ساری کی ساری سناواں گا جی۔۔۔اور واقعی اگلے دن اس نے ایسی ایسی کہانیاں سنائیاں ۔۔۔ بلکہ کہانیاں پائیاں کہ اس میں ہاسے کے نال نال عقل والی بھی بڑیاں گلاں تھیں۔
چھٹی کے بعد اگلی صبح سویرے اچھے نے سب توں پہلوں تے اپنے ہتھاں کے چھالے سر کو دکھائے۔۔۔سر جی ۔۔۔ دیکھو جی ۔۔۔ میں ہے تے جٹاں د ا ہی منڈا ہوںجی ۔۔۔پر میںنے کدی ایناسخت کم شم نیئں سی جی کیتا۔۔۔میرے ابے نے میرے کو بڑا چِھندا رکھا ہوا ہے جی۔۔۔میرا ابا کہتا ہے کہ پتر رج کے کھایا پیا کر تے اپنی جان بنا۔۔۔ میرا ابا سویرے تڑکے میرے کو مٹھی لسی کے دھڑیڑکے میں مکھن کے پیڑے ڈال کے دیتا ہے جی۔۔۔ اور میرے ابے نے 1400 روپے کلو والے ولایتی باداموں کی گِریاں بھی میرے کو لیا کے دی ہوئی ہیں جی۔۔۔سیب اور دوسرے فروٹ تو کدی ہمارے گھار سے مُکے ہی نہیں ہیں جی۔ایسے لئی میرا رنگ سیب کی طراں لالو لال ہے جی۔میرا ابا یہ بھی آکھتا ہے جی ۔۔۔ پُتراں نوں کھوائیے چنگا چوکھا۔۔۔ تے ویکھیئے شیر کی اکھ نال۔۔۔
سر جی ۔۔۔ وچ جئے میرا دماغ خراب ہو گیا تھا جی۔۔۔ میں باداموں کی گِریاں خود کھانے کی بجائے۔۔۔اپنے کبوتروں کو کھوا دیتا تھا جی۔۔۔پھر میرے ابے کو پتا لگ گیا تے اوس نے میری ساری ٹہل سیوا تے چنگیاں چنگیاں کھان والیاں چیجاں بند کر دِتیاں سی۔فیر میںنے جدوں سکول میں داخل ہونے کا وعدہ کیتا اور نال ای چنگا بندہ بننے کا یقین دوایا تو میرے گھار والے میرا اک واری فیر بڑا خیال رکھنے لگ پئے ہیں جی۔
سر جی ۔۔۔ میں سارے لوکاں کو دسنا چاہتا ہوں جی۔۔۔کہ سانوں اپنے ماں پیو کو کدی دھوکہ نیئں دینا چائی دا جی۔ تے اپنے ماپیاں کا ہر کہنا بھی مننا چائی دا ہے جی۔۔۔ کیونکہ ہن میرے کو بھی عقل آ گئی ہے کہ ساڈے ماں پیو ای ساڈا سب توں بوہتا خیال رکھن والے ہوتے ہیں جی۔جیہڑا اپنے ماں پیو اور استاداں کا کہنا نہیں مانتا ہے جی۔۔۔ اوہ ساری زندگی دھکے ای کھاتا ہے جی۔تسی مینوں سدھے راہے پا کے میری زندگی بدل کے رکھ دتی ہے۔۔۔میں تہاڈا دین نئیں دے سکتا ہوں جی۔
سر نے کہا۔۔۔ چنگی گل ہے تو اچھا بن گیا ہے ۔۔۔پڑھ لکھ کے توں کوئی وڈھا افسر لگ جائیں گا تو بڑی خوشی والی گل ہوگی۔۔۔ ٹھیک ہے اچھے۔۔۔ اب تو کل کی واڈھی کے بارے میں مجھے کچھ بتا۔۔۔کہنے لگا سر جی پہلوں میرے اینہاں ہتھ کے چھالیوں کا تو کچھ کریں جی۔سر نے اس کے ہاتھ پر اچھی سی آئنٹمنٹ لگا دی۔۔۔
پھر اچھا کہنے لگا ۔۔۔ سرجی جب میرے ابے نے پرسوں میرے کو واڈھی کا دسیا تو میں نے اپنے ابے کو آکھیا ۔۔۔ابا داتریا ں تو اساں نے تیز کروائیاں ای نہیں ہیں۔۔۔واڈھی کیسے کریں گے۔۔۔؟میرے ابے نے چھیتی نال میرے کو چاچے غلام نبی عرف گامے لوہار کی دوکان پر گھل دیا۔۔۔ جب میں چاچے غلام نبی گامے کی دوکان پر پہنچیا تو اوتھے بڑا رش لگیا ہویا تھا ۔۔۔میں نے سوچیا کہ لگدا اج تو رات کے بارہ ایتھے ای وج جان گے۔۔۔پر میں تے چاچے گامے کئیاں پھرتیاں ویکھ کے بڑا حریان رہ گیا جی۔۔۔اوہ دس بارہ داتریاں اکٹھیاں پکڑ کراپنے گھار کے اندر لے گیا۔۔۔ اور دس منٹاں میں اوہ داتریاں تیز کر کے اوہدے مالک دے ہتھ پھڑا کے اپنی مزدوری لے کے دوسرے بندے دیاں داتریاں تیز کرن چلا جاندا۔۔۔
بعد وچ میرے کو پتا لگیا کہ چاچے گامے نے بھی اب ترقی کر لئی ہے۔۔۔ پہلے اوہ ٹکورے یا ریتی کے ساتھ اپنے ہتھ سے سارے پنڈ کی داتریاں تِکھی کرتاتھا۔۔۔ اب اس نے داتریاں تیز کر ن والی مشین لا لئی تھی۔۔۔اس کا کم بھی سوکھا ہو گیا تھا اور اس کے کمائی وچ وی وادھا ہو گیا تھا۔اک دن میں نے چاچے گامے سے پچھیا۔۔۔؟ چاچا جی۔۔۔پہلوں تہاڈا ابا ۔۔۔ سارے جٹاں زمینداراں دا کم کرکے دیندا سی۔۔۔ ہن تسی سارے پنڈ دی سیوا کر رہے او۔۔۔ کی تسی اپنے پتر نوں وی ایہہ کم سکھایا اے۔۔۔؟
چاچے گامے نے آکھیا پتر۔۔۔آؤن والے وقت وچ ہن واہی بیجی دا سارا کم مشیناں نال ہو رہیا ہے ۔۔۔ اس واسطے میں اپنے پتر نوں اے کم نئیں سکھایا۔۔۔اوہ کوئی نوکری شوکری کرکے اپنا گزارہ کر لوے گا۔۔۔ سر جی۔۔ ۔ تساں کو بھی بتا ہے کہ پنچاں دساں سالاںکے اندر اندر لوہاراں ترکھاناں کا سارا کم تقریباً ٹھپ ای ہو کے رہ گیا ہے جی۔۔۔سارے لوک نویاں نویاں مشیناں نال اپنا واہی بیجی کاکم کر تے کرا لیتے ہیں جی۔۔۔کجھ لوکاں کا فیدا۔۔۔اور کجھ لوکاں کا نسقان وی ہویا اے جی۔۔۔ مزدور بندے کو اب مجدوری نئیں لبھتی ہے جی۔اس مشینوں کی وجہ نال بے روج گاری میں وادھا ہو گیا ہے جی۔
رات کو داتریاں تیز کرا کے میں لیا کے اپنے گھار ککڑاں والے آلے کے اوپر رکھ دتیاں۔۔۔رات کو ساڈیاں ککڑیاںکو اک چنگا تگڑا بلا کھان واسطے آیاتے میری اکھ کھل گئی ۔۔۔ میںنے اُچی آواز وچ رولا پا دتا۔۔۔بلا جدوں ڈر کے آلے کے اوپر چڑھنے لگا تے اوہدے پیر تیز نوکیلیاں داتریاں نوں جا لگے۔۔۔تے اوہ لہوو لوان ہو کے اوتھوں نٹھ گیا۔۔۔۔ میں کہیا۔۔۔ ہن چنگا ریاں ظالما۔۔۔تیرے کو تیریاں کیتیاں کابدلہ آپے ای مل گیا ہے۔۔۔ سر جی اک وری ایسے ای بِلّے نے میرے پنج ست کبوتر مار چھڈے تھے جی۔اوس ویلے میں بڑا اُچی اُچی رویا ساں جی۔۔۔ میرے کو کسے نے چپ وی نئیں سی کرایا جی۔
سر جی اگر اجازت ہووے تے ہن میں تھوڑا جیا پڑھ لواں جی۔۔۔؟ وڈھا افسر بھی تو بننا ہے جی میرے کو۔۔۔ اپنی واڈھی کی کہانی میں تہانوں شام کو آکے یاںپرسوں سنا دیواں گا جی۔۔۔ سر نے کہا ۔۔۔ اچھے ٹھیک ہے ۔۔۔ابھی تم ٹیچر کے پاس جاؤ اور آج کا اور کل کا اکٹھا سبق لے لینا۔۔۔پھر دو دن کی کہانی ساری کی ساری آ کے سنانا۔۔۔
اوکے سر جی۔۔۔ پھر ۔۔ ۔ اللہ بیلی۔

Facebook Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *