گلابی کالم قسط 4۔۔۔تحریر ۔۔قاسم سرویا

Spread the love

گلابی کالم قسط 4

پرانے اور سیانے لوکاں کی گلاں باتاں بھی بڑی سیانی ہوتی تھیں، کیوں جے اونہاں کے پاس چنگا سوچنے کے لیے واہوا سارا اور ویہلا ٹائم بھی ہوتا تھا۔ اب تو لوکاںکے پاس ٹائم ای نیئں ہیگا۔شاید لوک ہن اپنے گُٹ کے نال گھڑیاں نیئں بنّ تے ہیں۔ ۔۔ پر موبائلاں وچ میں تو ٹَیم ہیگا نا۔۔۔فیر وی جس کو دیکھو ہر کسے کی نٹھ بھج لگی ہوئی ہے۔۔۔ اور اس طراں کاہلی اور نٹھ بھج میں کیتے ہوئے کم کدوں ٹھیک ہوتے ہیں۔۔۔؟
سیانیاں سچ ای آکھیا تھا۔۔۔ سہج پکے سو میٹھا ہو۔۔۔ تے کاہلیاں اگے ہمیشہ ٹوئے ای ہوتے ہیں۔
کدی ہم نے سوچیا کہ اسیں اپنے گھراں پر ۔۔۔اور اپنے گھروں کے جیاں کی تربیت واسطے پورا دھیان دے رہے ہیں ۔۔۔؟ اپنی نویں نسل کوچنگا انسان بنانے کے واسطے ہمارے کو ساریاں چنگی گلاں باتاں پر عمل کرنا پوے گا۔ اپنے روزکے کماں میں ہم نے اپنے بال بچیاں ول صحی طراںدھیان دینا چھڈ دتا ہے۔۔۔ بہت سارے ماں پیو کو یہ پتا نہیں ہوتا کہ ان کے دھیاں پتر سارا دن کی کرتے رہتے ہیں اور اونہاں کے شوق کیہ کیہ ہیں؟
تربیت تے خیال رکھنے کے حوالے نال گھر اں وچ ماں کاکردار سب توںجیادہ اہم سمجھیا جاتا ہے۔ماں کو چاہی دا ہے کہ ہر ٹَیم گھر دے سارے جیاں تے بالخصوص بچیوں پر پکا دھیان رکھے تے ہر اُچی نیوی تے بھیڑی گل تے بچیاں کوگھُوری کڈھ کے ویکھے ۔۔۔ کیوں کہ پُت تے رَمبا چَنڈیا ہی چنگا ہوتا ہے۔اپنے بالاں کو کھانے کے لیے بھانویں سونے رنگیاں شیواں دیو۔۔۔ پر نظر شیر والی رکھو۔
اج کل واڈھی کا واہوا زور پیا ہوا ہے ، اس لئی اچھا اودھر مصروف ہے۔۔۔اچّھے نے اپنا اک پرانا واقعہ بیان کردیاں ہویاں آکھیا سی کہ اک دن میری مائی نے میرے کو سودا لینے کے واسطے ہٹی پر گھلیا۔ اوہ چنگا ویلا ہوتا تھا جدوں میری مائی میرے پر پکا اعتبار کردی تھی۔میری مائی نے میرے کو پنج ہزار روپیے کا کڑکدا نوٹ پھڑا کر آکھیا ۔۔۔اچھے! دکان والے بھا ء نوازکے پچھلے سارے پیسے وی دے آنا تے ہور گھار کا سودا وی لے آنا۔۔۔ تے نال ای میری مائی نے ہدایت وی کیتی کہ دھیان نال جائیِں تے یاد نال بھاء نواز کو سارے پیسے دے کر آئیِں۔
نہا دھو کے میں مائع والا لٹھے کا چڑ چڑ کردا سوٹ پایا تے بڑی ٹور نال ٹردا ہویا پاء نواز کی ہٹی پر اَپڑ گیا۔۔۔پہلوں جا کر میں بھاء نواز کو سودے والی چٹ پھڑائی کہ بھاء جی ایہہ سارا سودا پیک کردیوتے ایہہ لو پنج ہزار روپیے تے ساڈا سارا کھاتہ کلیئر کر دینا۔ بھاء نواز نے میرے سے پنچ ہزار کا نوٹ پھڑیا۔۔۔ اس کو اُوپر تھلے کر کے بڑے غور نال جھاتی ماری ۔۔۔ اپنے انگوٹھے کو تُھک لا کے نوٹ کا رنگ چیک کیتا اور اوس دیاں لائناں کو رگڑ کے ویکھیا ۔۔۔ تے بلب دی لو ول کر کے بابے قائدے اعظم کی پھوٹو کو اک اکھ بند کر کے دو تن وری نِیج لا کے تکیا۔۔۔تے فیر مینوں جرا غصے کے نال پچھیا۔۔۔ کاکا۔۔۔! ایہہ نوٹ اصلی ہے نا۔۔۔؟ میں نے آکھیا۔۔۔ہانجی بھاء جی۔فیر وی تسی اپنی پوری تسلی کر لوو۔۔۔
جدوں بھاء نواز کی پوری تسلّا ہو گئی تے اونہاں نے نوٹ کو چار پنج تہواں لا کے اپنے گلّے کے سب سے تھلے والے خانے میں دوسرے نوٹوں کے ہیٹھاں کر کے رکھ دیا۔۔۔اس توں بعد بھاء جی نے اپنے منڈے کو آرڈر دیا کہ جلدی نال اچھے کا سودا نکال کے ادھر رکھ دے۔۔۔دکان والا بھاء نواز اج بھونی کے ٹَیم ای پنج ہزار کا نوٹ ویکھ کے بڑا خش ہوگیا تھا۔۔۔تے اس نے اج میرے کو خاص طور تے پچھیا کہ ۔۔۔ اچھے!۔۔۔بوتل پینی اوں کہ چاء۔۔۔؟پہلاں تاں میں اپنی اتنی جیادہ مہمان نوازی ہوندیاں ویکھ کر بڑا حریان ہویا۔۔فیر میں دل میں آکھیا۔۔۔ اچھیا! اج موجاں کرنے کا دن ہے۔
اینی جیادہ ’’خدمت‘‘ ہوندی ویکھ کے ’’اچھا‘‘ بھی اج بُھووے چڑھ گیا تھا۔۔۔کہن لگا۔۔۔ بھاء جی انج کرو۔۔۔پہلاں ٹھنڈی جئی سَیوانپ کی اک بوتل منگوا لو تے فیر دُدھ پتی۔۔۔ تے نال لُون جرور منگوایاجے۔۔۔جدوں ٹھنڈی ٹھار بوتل میں لُون کی چٹکی بھر کے ڈالتے ہیں تو پھر جب بوتل چھالاں مارتی ہوئی باہر کو آتی ہے تو قسمے میرے کو بڑا سواد آتا ہے۔۔۔پھڑ لو ۔۔۔پھڑلو پے جاندی ہے۔۔۔ نالے اج میرے کالجے میں تھوڑی جئی گڑ بڑ وی ہے۔۔۔جدوں سیوانپ کی بوتل ڈکا ڈک اکو وری جھِیک لا کے چاہڑ جاؤں گا تے پنج ست وڈھے وڈھے ڈکار آن نال ہر چیز سیٹ ہو جائے گی۔۔۔ تے میں ہلکا پھُل ہو جاواں گا۔
پاء نواز نے اپنے منڈے کو آواز دتی کہ جا ۔۔۔جا کے پہلے سیوانپ کی بوتل لے کر آ۔۔۔میں آکھیا ۔۔۔ پاء جی جدوں تک آپ کا مُنڈا میرے لئی سامان کڈھتا ہے۔۔۔تے میں بوتل کے نال دو دو ہتھ کر لیتا ہوں۔۔۔تسی اپنے پتر کو ہُنے ای آکھ دیو ٹھہر کے اک ودھیا جئی دُدھ پتی کا آرڈر بھی دے آئے۔۔۔گھڑی مُڑی جان نال آپ کا ٹَیم نہ نا ضائع ہوجائے۔۔۔ (نال ای اچھے نے اکھ ماری)۔۔۔۔ کی یاد کرو گے پاء جی۔۔۔ میں نے کون سا روج روج آپ کی ہٹی پر آنا ہے۔۔۔پاء نواز تے اس دے منڈے نے بڑے غور نال میرے ول گھُوری کڈھ کے ویکھیا۔۔۔پر اوہ دونوں کر کجھ نئیں سی سکدے ۔۔۔بوتل چاء تے اج پیاؤنی ہی پَینی سی۔۔۔ پنج ہزار کا نوٹ جو گلے میں سُٹیا تھا۔
سودا لے کر جب میں اپنے گھار آیا تے میری مائی نے میرے کو اک وری فیر پچھیا۔۔۔ اچھے! پیسے دھیان کے نال پاء جی کو پھڑا دیئے تھے نا۔۔۔اچھے نے آکھیا۔۔۔ مائیے! توں فکر نہ کر ۔۔۔ بھاء نواز نے میرے سے پنج ہزار کا نوٹ لے کر اپنے گلے میں رکھ لیا تھا۔۔۔ پورا مہنہ ایہہ گل آئی گئی ہو گئی۔۔۔اگلی وری میرا جرا دماغ خراب ہوا ہوا تھا تو۔۔۔میری مائی آپے بھاء نواز کی دکان پر گھار کا سودا لینے گئی تو بھاء نواز آکھن لگا۔۔۔ بھین میریئے۔۔۔! غصہ نہ کرِیں۔۔۔ پچھلے پیسے وی اجے رہتے ہیں۔۔۔اوہ وی گھل دینا۔۔۔میری مائی بوہت حریان ہوئی۔
میری مائی نے اوتھے پاء نواز کی دکان پر تو کچھ نہ آکھیا۔۔۔چپ چپیتی سودا لے کے گھار آگئی۔۔۔تے آؤندیاں سار ای اک توت دی چھمک پھڑ کے مینوں پھینٹی لانی شرو ع کر دتی۔۔۔میں کئی وار پچھیا وی۔۔۔ مائیے! میرے کو دس تے سہی ہویا کیہ ہے۔۔۔؟ پر میری مائی نے میری اک نہ سنی تے میرے کو مار مار کے میرا کچومر کڈھ دیا۔۔۔جدوں میرے پِنڈے پر۔۔۔ میرے گِٹیاں گوڈیاں پر۔۔۔ تے میرے ہتھاں باہواں پر چھمک دیاں چنگیاں لاساں پے گئیاں۔۔۔ تے میری مائی ہنبھ کے بہہ گئی۔۔۔ اتنی دیر تک میرا دماغ بھی واہوا ٹکانے ہو گیا تھا۔۔۔
میں فیر پچھیا۔۔۔ مائیے ! اب تو میرے کو دس دے۔۔۔ میری اج ہڈی پسلی اک کیوں کیتی ہے۔۔۔؟میری مائی نے آکھیا ۔۔۔ تیرا ککھ نہ جائے۔۔۔( میری مائی میرے کو ایہو جیاں گالھاں ہی دیتی تھی۔۔۔ تیرا ککھ نہ جائے۔۔۔ وے جین جوگیا۔۔۔ وے تیرا بیڑا تَر جائے۔۔۔) پہلاں میرے لئی پانی لیا تے فیر میں تیرے کو اگلی گل پچھتی ہوں۔پانی پی کے جدوں میری مائی کا ذرا ساء نال ساء رلیا تو میرے کو آکھن لگی۔۔۔تینوں میں پکی کیتی سی کہ دھیاں نال پنج ہزار پاء نواز کو دے کر آئیِں۔۔۔اج اوہ میرے کو آکھ رہیا تھا کہ تہاڈا پچھلا بقایا وی اجے رہتا ہے۔ میری توں بے عزتی کرا دتی نا۔۔۔
میں نے آکھیا ۔۔۔مایئے! میرے سے قسم لے لے۔۔۔ میں پنج ہزارپاء نواز کودے آیا تھا ۔۔۔ چل ہُنے میرے ساتھ۔۔۔اوتھے جاکر ددھ کا ددھ او ر پانی کا پانی ہو جائے گا۔جاندیاں سار ای میں پاء نواز کے گل پے گیا۔۔۔ پاء نواز۔۔۔! توں اج میرے نال چنگی نہیں کرائی۔۔۔میری مائی نے میرے کو مار مار کے میرا برا حال کر دتاہے۔۔۔ذرا چیتا کر کھاں۔۔۔ پچھلی وری جدوں میں تیرے کول سودا لینے کے واسطے آیا تھا تو میں نے تیرے کو پنج ہزار کا نوٹ دیا تھا۔۔۔ توں اوہنوں چنگی طراں چیک کر کے اپنے گلّے کی سب توں تھلے والی نکرے رکھ لیا تھا۔۔۔ تے نالے ایہہ وی چیتا کر ۔۔۔ توں خش ہو کے میرے کو سیوا نپ کی بوتل تے چاء وی پیائی تھی۔
میری ایہہ ساری بپتا سن کے پا ء نواز سر پھڑ کے بہہ گیا۔۔۔ تے میری مائی کو آکھن لگا۔۔۔ بھین جی۔۔۔میرے کو معاف کر دیو۔۔۔ واقعی تیرا پُت اچھا سچ آکھ رہیا ہے۔ ہُن میرے کو چیتا آ گیا ہے ایہہ پنج ہزار دے گیا تھا۔۔۔ میرے کو کھاتے میں سے کاٹا پھیرنایاد نہیں سی رہیاتھا۔۔۔فیر پاء نواز نے میرے ول نِما نِما ہس کے ویکھیا تے آکھن لگا۔۔۔ یار اچھیا! تیرے کولوں وی میںہتھ جوڑ کے سوری کرداں۔۔۔ایہہ لے میرے ولوں مفت سروں دا تیل تے جا کے گرم کر کے ٹکور کر لیئں۔۔۔ تے فیر اوہنے اپنے منڈے کو آواز دتی۔۔۔ اوہ کاکا! ۔۔۔اچھے کو اک وڈھی سوا دو لیٹروالی سیوانپ کی بوتل وی دے دے۔۔۔ دو دن کلیجے نوں ٹھنڈ پا لوے گا۔۔۔ تے اس دا غصہ مَٹھا پے جاوے گا۔
سیوا نَپ پی کے اچھا چنگا بھلا ہوگیا اور اس کو مار مُور کھادی سب بُھل بھَل گئی۔۔۔ ایسے لئی تو کہتے ہیں۔۔۔ ماں پیو دیاں کُٹاں تے گالھاں۔۔۔ گئو مکھن دیاں نالاں۔۔۔یہ بات تو ویسے ای سب کو دسی ہے کہ اپنے بچیوں کو ہر گل بات کی تربیت دھیان نال چنگی طراں کرنی چاہی دی ہے۔۔۔ واڈھی کیاں باقی گلاں تو ابھی اچھے نے اگلی واری آکے دسنیاں ہیں۔۔۔ تیار رہیا جے۔۔۔

نوٹ: ادارے کا لکھاری کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں

 

Facebook Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *