خود آ۔۔۔ ۔ ۔۔از۔۔۔۔۔ظہورحسین

Spread the love

خود آ۔

کالا،سرخ،سپید، ناتواں، توانا، نا توانا، ضعیف، شباب کے وسط، بہت ہی سیاہ، بھدا،
ستواں ناک، سرخ و سپید رنگت، نیلی آنکھیں، بھر بھرا شریر، کسرتی بدن، چست کندھے، لاغر ھے، ہڈیوں کا ڈھانچہ، گرنے کو ہے، گر رہا ہے، گر گیا-ہا ہا ہا-واہ واہ کیا روپ ہے،رنگ، آنکھوں میں چاشنی، شیریں گفتار، سرخ گال، بات میں ٹال، چال چال، ڈھال، اک سوال ہے؟؟ کوئی نہیں جواب؟ صرف سوال؟ سوال ہے؟ سوال کیوں ہے؟ کالا ہے، بہت کالا ہے، بھدا، موٹے موٹے ہونٹ، چپٹی ناک، اونٹ رے اونٹ، سوال ہے، ستواں جسم، کسرتی پیرہن، شاعر کا خواب، حسن پرست کا محور، آرٹ کا بت، بت ہے، بت کسے ہیں، ماتھا ٹیک رہے ہیں،سر سجدے میں، اللہ، اللہ، اللہ- اک سوال ہے، بابا اک سوال ہے، معاف کر دے، جا جا، کیا تو مستحق بھی ہے_صدقے کا_صدقے جاواں_ کیا نور ہے_ واہ کیا رنگ ہے_ رنگت جیسے، چودھویں کے چاند کی چھلکتی چاندنی کی کرنیں، ریت کے زروں کو دیپوں کی مانند جگمگائیں، گھپ اندھیرا، جہالت، مٹی، گرد، دھواں، درد، کسک، اف اک سوال؟ کہاں ہے؟ وہ کہاں ھے؟ بھدے کمزور، نحیف پیرہن، ابھی گرا ہے_ فاقوں سے، افلاس کی زد میں، میت_ لا وارث، بین، ناپید، ناپید ہے جواب کیا_ خود آ_ خود آ، القا، القا، بچا، بچا، سن، سنا، سنا، سن کیا سوال ہے؟ خود آ، القا، القا، حرا، حرا، بتا، سن، سنا،، بہت کمزور ہے، ناتواں، مفلس، چادر سو پیوند، پھٹی پرانی چپل اک دوسرے پا دوسری، چل،چل،چل،دشت،خار،خار،خار،خوار،خیر خیر،شر،شرخیر،خیرشر،کالا مہاکالا،بھدا،پھینی ناک،دھنی آنکھیں،پیلاہٹ ہے، گرتا ہے،گر رہا ہے،گر گیاہے،آ،آ،تینوں اکھیاں اڈیکدیاں،واجا مار،مار،مار،مار،مر گیا،چلا گیا۔ در مقفل کواڑ کالا بے وا، نہ ہوا،نہ ہوا، نہ روشنی، نہ خوشبو، نہ رنگ، نہ پیرھن، نہ آنگن، نہ بیل، نہ پھول، کوئی بھول، بھول ؟ بھول ؟ یاد کر، خود آ، خود آ، بتا، سنا، ُسن، ُسن، ُسن، بس سن،میری دھن،بن،ان،ان،ان،ان بن،لو ہے، لو ہے، بو ہے،بو ہے، بد بو،اف، تیرگی ہے، جوگی ہے، صوفی ہے، موصوف بھی ہے، ہے، ہے، ہے، وہ بھی، یہ بھی، تو بھی، میں، میں، میں نہیں، نہیں، نہیں، نا ، نا ، نا ، نا، نہیں ہے، ہائے ،ہائے، ہائے، ہائے_ کرب و بلا، چھ ماہ کا بابا کا لاڈلا، کرب و بلا حیا،حیا،حیا،بے حیا۔ جوان، بوڑھا ، سب، پیاسا ، فرات ہے ، موج پر ، آسمان ہے ، زمین ہے، ضمیر،شمشیر، خود آ ، خود ، سن ، سنا ، سن ، سنا _ کیا ہے؟ کیوں ہے؟ کیسے ہے ؟ کب سے ہے ؟ خود آ، القا ، القا ، حرا ، حرا ،حرا ، حرا ، آ ، آ ، آ ، آ – آسمان ، دور ، نیوز ، دہلی دور است ، بتا ، بتا – پتہ ، اتہ پتہ ، اتہ پتہ ، خط پتہ ، خیر و عافیت ، دکھ ، دکھ ، دکھ ، دکھ ، سکھ ، سانس – سانس نہ سکھ – سکھ نہ سانس – کالا ، موٹا ، چھوٹا ، لمبا ، تڑنگا ، سیاہ ، کالا سیاہ ، شاہ ، گدا ، آہ ، آہ ، آہ ! آہ ! آہ ! بتا ، بتا ، القا ، القا ، حرا ، حرا ، حرا ، سن ، سنا ، آ – خود آ – بخدا ، خود آ – بخدا ، بخدا ، خود آ – مسجد ، مندر ، گرجا ، گردوارہ ، گرا ، خود آ ، بخدا آ

 

Facebook Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *