ہاہا ہاہاہاہاہاہا……….از……سمیع اللہ خان

Spread the love

ہاہاہاہاہاہاہاہا

 

ہا ہا ہاہاہاتو تُم جسم و روح میں اُلجھے ہو؟کیا تُم کبھی سُلجھے ہو؟یا یوں ہی کُھلتے ہو؟سب کہہ دیتے ہویا کچھ کہنے سے ڈرتے ہو؟رات کو دِن سے جُداکرواورپھر اُس کا تجزیہ کرو۔دوپہرکے وجود کو سہہ پہرکاہجردو۔شام کورات سے الگ تھلک کرکے دیکھو۔تاریکی کو صبح کی مفارقت عطاکرو۔آسمان کو زمین کی نگاہ سے اورزمین کو آسمان کی نگاہ سے نہ دیکھو۔پھر پھر بتلانا کہ کیاسمجھے ہو؟اِدھر آئو کان کروپھر بتائوں گا۔چُپ مگربتانا کسی کونہیں ۔میں نہ آرش ہوں نہ ہی مُجھے آرے میں آنے کی جُستجو۔نہ میں سقراط ہوں نہ فلیمنگ۔نہ منصورہوں نہ سرمد۔ہاہاہاہاہاہا۔۔۔۔۔میں جانتاہوں۔۔۔۔تُم جانتے ہو۔۔۔۔نہیں نہیں نہ تُم سب جانتے ہو نہ میں سب جانتاہوں۔۔۔۔کتنے بھولے ہو۔۔۔۔بُلھارانجھاکے مُنہ سے اپنی بات نکلواگیا۔۔۔۔۔سدونی مینوں دھیدورانجھاہیرنہ آکھوکوئی۔۔۔۔بُلھاکبھی نہ بھُلا۔۔۔۔لیٹسٹ ورژن تھا۔۔۔۔۔پھرنہ کرناکسی کوبات ۔۔۔۔۔سُنوکیمیابھی انھی کے کھاتے میں تھا جوکرامات کامنبع تھے۔۔۔۔لیکن یہ بات نصاب میں نہ آسکی۔۔۔۔علم ،حلم ،شلم اورچِلم ۔۔۔۔۔ہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔سمجھ سمجھ کہ بھی جو نہ سمجھے ۔۔۔میری سمجھ میں وہ ناسمجھ ہے۔۔۔۔۔مگر تُم سب جانتے ہو ، پہچانتے بھی ہو۔۔۔گردانتے بھی ہو۔۔۔۔حیرانتے بھی ہو۔۔۔۔۔بس وہ نہیں ہوتے جو ہم ہو جاتے ہیں ، جو وہ ہو گیاتھا۔۔۔۔اِدھر آئو،اُدھر دیکھو،وہ دُوراُفق پر کچھ لالی سی ہے ۔یہ کِس کا خون ہے ؟بھائی یہ سُورج زمین اورآسمان کے درمیان کسی سائنسی عمل کی وجہ سے ایساہوتانظرآتاہے۔ہاہاہاہاہاہا۔۔۔ہاں ہاں ،بالکل ایساہی ہے۔۔۔۔اِس عمل میں حلاج سے لے کر اِبن عربی تک سب ملوث ہیں ،،،مُجھے تو اِس میں الخوارزمی کا بھی ہاتھ نظرآتاہے۔۔۔۔اوریہ کمینہ ،خباثت بھرا،غلیظ انسان میں نے ہلاکوکے دامن میں اِس لئے جانے دیاکہ یہ فلاں سے تھااوروہ جو میرے دامن میں ہے وہ اتنا کٹرنہیں ہے اورمیری عزت بھی بلاکی کرتاہے۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔۔وہ ابوبکرتو کملاہی تھا۔۔۔۔۔اوروہ وزیر۔۔۔۔۔کہتاتھاف۔۔خ ۔۔۔مصر۔۔۔۔کو تُم نے تجاوزات سمجھا۔۔۔۔سُنواب میں نے تمہیں تجاوزات میں بدل کر ہلاکوکے گھوڑوں کے ٹاپوں کی ملکیت میں دے دیا۔۔۔سب بس اسی حدتک محدودتھے ۔۔۔۔اِن کی سوچ کا محورجابرومالک کااُتناہی نصاب تھاجتناان کو لوری دینے کے لئے کافی ہو۔۔۔۔۔یہ علقمی ،کُندی،برمکہ ابومسلم خراسانی سب بدبودار۔۔۔۔بس نہ تخت نہ تلوار۔۔۔۔توں کاہے کاسانجھے دار۔۔۔اپنی بساط پر پُکار۔۔۔یہ ڈھال کی جھنکار۔۔۔۔ہے توں تکار۔۔۔
ترتیب ؟نہیں مجھے اِس سے کوئی شغف نہیں ۔۔۔تُجھے چاہ ہے ؟توں سمجھنا چاہتاہے ؟پرت درپرت کھولناچاہتاہے ؟بال کی کھال اُتارناچاہتاہے یااپنی اُترواناچاہتاہے ؟تجھے سکون نہیں آرہاناں ؟میں تو بس اتناجانتاہوںسورج زمین کے گردگھومتاہے اوریہی سچ ہے ۔۔۔۔نہ نہ نہ نہ توں اپناسچ اپنے کول رکھ ۔۔۔۔مینوں کوئی لوڑشوڑکوئی نئیں ۔۔۔۔میرے اندرکوئی توڑپھوڑوی تے کوئی نئیں۔۔۔۔میں نہ روز ٹوٹتاہوں نہ پھُوٹتاہوں ۔۔۔نہ کٹتاہوں نہ مرتاہوں۔۔۔یہ تو تجربہ گاہ کے کسی مٹی کے پُتلے کا کام ہو گا۔۔۔میں رہتازمین پر ہوں مگر حقیقت یہ ہے کہ آسمان سے اُتراہوں۔۔۔
وہ دیکھ وہ جو بلب کی روشنی میں کچھ پڑھ کر دنیاداری سے بیگانہ ہو رہاہے۔۔۔اور یہ مُنے جو پاٹ شالامیں یخ ہواکے مزے لے کر روحانی تسکین لے رہے ہیں ۔۔۔۔یہ جو یہ ہے گناہوں کی میل اُتارنے گھنٹوں میں پہنچ رہاہے۔۔۔۔یہ سب کس ذرائع کا استعمال کررہے ہیں۔۔۔علت اورمعلول۔۔۔۔کاز اینڈایفیکٹ۔۔۔۔۔ٹیبولاراسا۔۔۔۔۔میراتونکل گیاہاسا۔۔۔۔۔لینگویج ایکوزیشن ڈیوائس ۔۔۔۔ہاں یہ میرے مطلب کی بات ہے۔۔۔۔۔جَبِلَت جَبِلَت ۔۔۔۔۔شروع سے آغازسے ۔۔۔۔کون ہے کون ہے ۔۔۔۔وہی تو ہے جو۔۔۔۔۔۔بس بس ۔۔۔۔خاموش ۔۔۔۔اشارہ۔۔۔۔کنارہ۔۔۔کُفارہ۔۔۔ستارہ۔۔۔۔نہ زمین پر نہ آسمان پر ۔۔۔۔۔نہ مشرق نہ مغرب،نہ شمال نہ جنوب۔۔۔۔یا تُوں ہے یامیں ہوں۔۔۔۔پلٹ دے۔۔۔نیست ونابود کردے ۔۔۔۔۔بس پھر نہ سنبھلاکچھ ۔۔۔۔یہ راز ہے ۔۔۔راز رہے گا۔۔۔یہ بس اہرام مصر۔۔۔۔۔لب نہ کھول ۔۔۔۔وہ پیچھے تھے یا ہم آگے ہیں یہ سب سوئی دھاگے ہیں ۔۔۔۔ہم کسی اورکی خاطربھاگے ہیں ۔۔۔یہ تیرے غم کے لاگے ہیں۔۔۔وہ تان سین کے راگے ہیں۔۔۔یہ جہانگیرکے معالج کے نصیب جاگے ہیں۔۔۔۔ہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہا۔۔۔تیرے ہاسے شدت کیوں اختیارکرگئے ہیں؟میں سوچ رہاہوں روح اورجسم ؟دفعان شفعان حیران پریشان انجان پہچان شبستان گلستان ہندوستان پرستان شیطان کافرستان یاقوت ومرجان دل جان ارے جنگل کے شہزادگان یہ تمہارانہیں کام ۔۔۔۔ہاہاہااررررے اب کی بارہنسی رُک کیوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔تلورشلوربلورمورٹکورسب کجھ ہور۔۔۔۔دربان بندگان ۔۔۔۔۔۔۔۔روح اورجسم کاناطہ ۔۔۔۔۔عربی شربی غربی شرقی ۔۔۔تُرکی بہ تُرکی۔۔۔ہوئی قُرقی ۔۔۔۔۔نہ اُتارنہ چڑھائو،نہ ہارنہ سنگھار،نہ تارنہ اوتار،نہ حق دارنہ سمجھ دار،سوچ،خیال،پریشانی،دیوانی،حیرانی،رائیگانی۔۔کھوج،موج،،فُرقان ،فرحان ،ہدایت گان،اندرکاانسان۔۔۔ شان بان ،میزبان مہمان حساب کتاب شتاب شباب گرداب حجاب الگ تھلگ ۔۔۔۔۔ہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔

Facebook Comments

2 thoughts on “ہاہا ہاہاہاہاہاہا……….از……سمیع اللہ خان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *