خون ۔۔۔۔۔۔۔۔از۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سمیع اللہ خان

Spread the love

خون

از:سمیع اللہ خان

ناسک :دو ،دو ،پورے سو۔
فہمیدہ:گندہ ہے ،پرگندہ ہے،
ماہین :چنگابھلاکلا۔
ناسک:کھائی ،تباہی ،دہائی۔
فہمیدہ: عاصی،کھاسی ۔
ناسک:چل رے ،شل رے،حل رے؟
ماہین:پل رے،بل رے،گھل رے،آج نہیں توکل رے۔
ناسک:شام آئی،قصائی،نیندرنہ آئی۔
ماہین:وہ آئے،ماں جائے پرتیرے بن چین نہ آئے۔
ناسک:ہائے ،ہائے ،دل ہاتھ نہ آئے۔
ماہین:تھارے دوارے،نین سہارے،کرارے پرارے
ناسک:سائیں ،سائیں،سائیں۔
ماہین:تل رے،تل رے ،نہ گل رے۔
ناسک:عقل رے،عقل رے ،بکل رے۔
ماہین:نل رے،ٹل رے،تھل رے۔
ناسک:مل رے ،دھل رے،نمل رے۔
ماہین:تائیں،بائیں ،شائیں۔
ناسک:سنبھل رے،کھٹمل رے،دُھپل رے۔
ماہین:تھائی،تائی،نظرنہ آئی۔
ناسک:تھارے کو،تھارے کوکچھ نہ مارے کو۔
ماہین:ہاتھ ہلاکے’’آداب اے،شاداب اے،شاداب اے‘‘
ناسک:نزلہ،زلزلہ،زلزلہ،زلزلہ۔
ماہین:گھرکلا،مرکلا،ٹرکلہ،تکلہ،پگلا۔
ناسک:عہدائی،شیدائی،عہدائی،پذیرائی۔
ماہین:پاک،ناپاک رے۔
ناسک:آب آب رے،شباب رے۔
ماہین:وہاب رے ،وہاب رے۔
ناسک :بے تاب رے،بے تاب رے پرپانی نہ ناپ رے،دریارے ،مٹیارے،نہ پاپ رے۔
ماہین:غرقاب رے۔
ناسک:نایاب رے ،نایاب رے،اپرآب رے ،دل رباب رے۔
ماہین:پھارے،شارے،تارے،تارے،ہزاراب رے۔
ناسک:کباب رے،نہ حساب رے،ماہی بے آب رے۔
ماہین :کساب رے،کساب رے،کساب رے۔
ناسک:گندرجائی،مندرآئی،مندرپائی،پوجاپائی،پھر نہ باہرجائی۔
ماہین:کوکاکولا،پے گیارولا،بڑبولاکچھ نہ بولا۔
ناسک:بچہ آئی،ادھربھائی،اُدھرناسائی۔
ماہین:دردرکے اولے ،بہارکچھ نہ بولے۔
ناسک:تیاررے،شیاررے،پرتاب رے۔
ماہین:ہولے ہولے پرناہی شعلے۔
ناسک:دل پکارے،پیارے ،کچھ نہ بچارے،دیارے،دوارے،سب وپارے ،بیکارے بیکارے۔
ماہین:نہارے،نہارے ،قضارے،قضارے،ہارے ہارے ۔

حصہ دوم

فہمیدہ:دائیں ،بائیں۔
ناسک:آہیں،صدائیں۔
فہمیدہ:سنارے،سنارے۔
ناسک:بچا!رے،بچا!رے۔
فہمیدہ:کملا!رے،کملا!رے۔
ناسک:گرداب رے،دوآب رے۔
فہمیدہ:نقاب رے ،نقاب رے۔
ناسک:دوکارے،چوبارے،کاروبارے سب دھتکارے،کسی کونہ پکارے ،کوئی نہ مسکارے سب بمبار!ے سب بمبار!ے۔
فہمیدہ:ناک رے،خاک رے،خاک رے۔
ناسک:ہتیا!رے،ہتیا!رے۔
فہمیدہ:مُٹیا!رے،مُٹیا!رے۔
ناسک:پارے پارے پارے پارے
فہمیدہ:شنکارے،شنکارے،غرارے،غبارے۔
ناسک :دھتکارے،دھتکارے۔
ٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍفہمیدہ:متھا!رے ،ٹھنکا!رے،من !کارے۔
ناسک:ڈنکا!رے،بن!کارے،دھن کارے۔
فہمیدہ:نہ دھن کا،نہ تن کانہ من کا
ناسک:گُن کا،اُن کا،اِن کا ،رون قا،رون قا۔
فہمیدہ:چمکا!رے،دھمکا!رے۔
ناسک:ہائے ہائے ۔وہ آئے؟
فہمیدہ:ناہے ،میرے سائے ،کوئی نہ آئے توکچھ بھی تونہ پائے،کیوں ستائے،کامیں شودر!ائے۔
ناسک:پھٹکارے،کتکارے،وفارے ،وفا!رے۔
فہمیدہ:تقسیم کارے ،ہرکارے
ناسک:آ!رے،آہ !رے،آرے،کٹا!رے،کٹارے،کچھ نہ بچارے۔
فہمیدہ:میرے پیارے،نہ دل دکھا!رے،ہرستم مجھ کوآرے،خدا!رے،خدا!رے ،میرے پیا!رے ،میرے پیا!رے۔

سوم

ماہین:پیا!رے،پیا!رے ،سامنے کوکیاہوارے۔

ایان:ملا!رہے،وہ خدا!رے،سب کاانجام رے،نازک اندام رے،براکام رے،سب دام رے،ناکام رے ،میں ،توں ،وہ ،یہ سب شام رے،کچھ نہ کام رے،دھرم کامان رے،بھگوان !رے،اس کامان رے،وہ بوہتانادان رے ،مورا!ہمدام رے۔
ماہین:تھاری بات اوررے پروہ کون رے؟
ایان:میرے کوکام رے،تھارے نام رے،تھارے ہاتھ کیوں کانپ رے۔

.ماہین:ہم رکاب رے،دل رباب رے،عالمگیرکے بچوں کاانجام رے

 گڑکاگاجارے،وسطی ہندوستان میں ٹوگاپورکاراجہ رے،ہائے بجٹ کاخواجہ رے،اترپردیش اے ،جالموں کادیش اے ، ،آکسفورڈکایہ بوبی رے ،ہندمیں ظالم جوگی رے،،وزیرخزانہ علی داد اے،غربت کاسندباداے ،خونی کنواں رے ،دل کا دھواں رے،راجہ کے جام رے ،ماں بچوں کے آنسو بھگوان تھام رے ،چرن داس بانس پر پھانس رے،نیچے سانپوں کا سانس رے،راجہ کاانجام رے ،کچھ نہ دنیاکادام رے 

                                        حصہ چہارم

 

ماہین:نی !کما!رے،گرچہ بہار!ے،اکلاپامارے۔
رانی:جنم جنم کاساتھ رے ،وہ بوہتاغرقاب رے،پراب کچھ نہ داب رے،
ماہین.:قصور!اے،منظور!اے،پرہجوم رے۔

رانی:گل!کارے،گلکارے،تھارے ،پسارے،بوہتا!رے۔
ماہین:شباب رے ،شتاب رے،قضا!آب رے،کذاب رے۔
رانی:بیس رے ،تیس رے ،پیس رے۔
ماہین:پیا!رے ،پیا!رے،تھارے بنانہ لاگےموراجیارے۔
رانی:زندہ رے ،پائندہ رے،تابندہ رے ۔
ماہین:توجانے ؟میری مانے؟
رانی:بول رے،کچھ کھول رے۔
ماہین:کفنا!رے،پیارے ،پلکانے،بیگانے،کیاکوئی میرے مانے؟

رانی:دل دکھارے،اک میرے یار!اے،بوہتاپیارے،پرکوئی اوردفنارے،نہ بس نہ ہنس،نہ نس،نہ رس۔
ماہین:کچھ بتارے،جی !متلا،رے،کچھ نہ بھا،رے۔
رانی:اب کیا بچا!رے ،وہ سچارے،جونہ بچارے۔
ماہین:وہ پام رے ،وہ گلفام رے،دومیراپیام رے،ماہتاب رے،آفتاب رے،میرامان رے،کچھ کام رے،ذراتھام رے ،تھام رے،دوام رے ،معاف رے،شاف رے ،میری خاطرسب چھاپ رے تھاری کتاب رے،بڑی شاداب رے،تھاراچہرہ تیرامیرا سہرا،تھاری الجھن میری سلجھن ،تھارادام رے موہابام رے،
رانی:ماہین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایان:سنبل وریحان رے،مصروشام رے،یوسف ویامین رے،کوئی نہ امین رے،سب کمین رے۔
ماہین:رام رے ،دوگام رے ،مورانام رے،پرنام رے،
رانی:سن!ری،’’کُن‘‘ری۔
ماہین :دھان پیا،مان پیا۔
رانی:ایان رے ،بیان رے،دربان رے،غلام رے،بنام رے۔
ماہین:اُس مصورکاہرشاہکار
ساٹھ پینسٹھ برس اوربس
یوں رگیں بنی ہیں جسم کی
ایک نس،ٹس سے مس ،اوربس!!


ایان:ماہین۔۔نہ رے ،نہ رے،رانی!تھام رے،میرایاردوگام رے
رانی:سب دام رے،کچھ نہ کام رے،ستمگرزمانہ ،ہرطرف بہانہ،کوئی بھی نہ مانا۔
ایان:خون!رے،خون !رے،خون!رے،جون !رے،جون!رے،لون رے لون،مار!رے،مارے رے،ساڈے لونڑ وچ کیوں مار اے ،لون رے ۔خون۔۔۔۔۔۔۔رے ،۔

Facebook Comments

One thought on “خون ۔۔۔۔۔۔۔۔از۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سمیع اللہ خان

  1. It is an excellent and exquisite piece of absurd writing ranging from the personal griefs to national and international sorrows. The deliberate rhyme in the chaos tells a lot about the uncertainty of life, society and people. Keep it up. I am one of your readers and you cannot find many to comprehend what you wrapped.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *